A must read article on Ishtiaq Ahmed’s death situation – By Javed Chaudhry

’’مولوی صاحب مر چکے ہیں‘‘

جاوید چوہدری

منگل کا دن تھا،نومبر کا مہینہ تھا،تاریخ 17 تھی اور سن تھا 2015ء،قاری عبدالرحمن انھیں کراچی ائیر پورٹ پر ڈراپ کر کے واپس چلے گئے،راستے سے فون کیا،جواب دیا ’’ بورڈنگ کارڈ میری جیب میں ہے،ظہر کی نمازپڑھ لی ہے،فلائیٹ وقت پر ہے،عصر انشاء اللہ لاہور میں پڑھوں گا‘‘قاری صاحب مطمئن ہو گئے،دن کے سوا بجے تھے،فلائیٹ نے ڈیڑھ بجے اڑنا تھا،قاری عبدالرحمن نے ڈیڑھ بجے دوبارہ فون کیا،انھوں نے فون اٹھایا لیکن وہ بول نہ سکے،قاری صاحب کو ان کے کراہنے اور اونچی اونچی سانس لینے کی آوازیں سنائی دیں،قاری صاحب نے بلند آواز سے پوچھا ’’حضرت آپ خیریت سے ہیں۔

آپ ٹھیک تو ہیں‘‘وہ جواب دے رہے تھے لیکن بات سمجھ نہیں آ رہی تھی،قاری صاحب اس وقت شاہراہ فیصل پر تھے،وہ مڑے اور گاڑی واپس ائیر پورٹ کی طرف دوڑا دی،وہ راستہ بھر انھیں فون کرتے رہے لیکن انھوں نے دوبارہ فون نہیں اٹھایا،قاری صاحب ائیر پورٹ پہنچے،ائیر پورٹ حکام سے ملے،انھیں بتایا،فلاں مسافر شاہین ائیر لائین کی فلائیٹ سے لاہور جا رہے تھے لیکن وہ لاؤنج میں بیمار پڑے ہیں،مجھے ان تک لے جائیں،حکام نے فوراً جواب دیا،شاہین ائیر لائین کی فلائیٹ جا چکی ہے،آپ کا مسافر چلا گیا ہے،قاری صاحب نے ان کے سامنے موبائل ملایا،ان کے فون پر بیل جا رہی تھی۔

قاری صاحب نے حکام کو فون دکھایا اور بتایا،میرے مسافر کا فون آن ہے،وہ ابھی تک لاؤنج میں موجود ہیں،مجھے اندر لے جائیں،حکام نے انکار کر دیا،قاری صاحب گیٹ پر کھڑے ہو کر انھیں مسلسل فون کرنے لگے،تھوڑی دیر بعد کسی صاحب نے فون اٹھا لیا،قاری صاحب نے کہا ’’آپ فون اشتیاق صاحب کو دے دیں‘‘اس صاحب نے دکھی آواز میں جواب دیا ’’آپ کے مسافر انتقال کر چکے ہیں‘‘قاری صاحب کے منہ سے چیخ نکل گئی،انھیں اس بار اندر جانے کی اجازت مل گئی۔

وہ اندر پہنچے تو ٹوٹے ہوئے گندے سے اسٹریچر پر پاکستان کے اس عظیم مصنف کی لاش پڑی تھی جس نے 45 برس تک ملک کی تین نسلوں کی فکری رہنمائی کی،جس نے 100 کتابیں اور 800 ناول لکھے،جس نے دو ہزار صفحات پر مشتمل اردو زبان کا طویل ترین ناول لکھا،آپ کا بچپن یا لڑکپن اگر ستر،اسی یا نوے کی دہائی میں گزرا ہے اور آپ کا کتاب سے ذرا سا بھی تعلق رہا ہے تو پھر اس گندے اور ٹوٹے ہوئے اسٹریچر پر پڑی وہ لاش آپ کی محسن تھی۔

وہ پوری زندگی بچوں کے لیے سسپنس سے بھرپور جاسوسی اور تفتیشی کہانیاں لکھتے رہے،آخر میں اپنے لیے موت پسند کی تو وہ بھی تفتیش اور سسپنس سے بھرپور تھی،کراچی ائیرپورٹ پر اس عالم میں فوت ہوئے کہ ان کے ہاتھ میں بورڈنگ پاس تھا اور ائیرپورٹ کے اسپیکروں سے اعلان ہو رہا تھا ’’ شاہین ائیر لائین کے ذریعے کراچی سے لاہور جانے والے مسافر اشتیاق احمد فوری طور پر فلاں گیٹ پر پہنچ جائیں‘‘اعلان ہوتا رہا اور بورڈنگ پاس ہوا میں لہراتا رہا لیکن وہ سیٹ سے نہ اٹھ سکے،جہاز لاہور چلا گیا اور وہ جہاز کے بغیر آخری منزل کی طرف روانہ ہو گئے اور ملک کے وہ لاکھوں بچے یتیم ہو گئے جن کے وہ چاچا جی تھے،اشتیاق چاچا جی،ایک ایسے چاچا جی جنہوں نے انھیں بچپن میں ادب اور نیکی دونوں کی لت لگا دی تھی،جنہوں نے انھیں پاکستانی بنایا تھا،اردو زبان میں بچوں کے ادب کے سب سے بڑے خالق اشتیاق احمد ہم سے بچھڑ گئے۔

اشتیاق احمد ایک ایسے انسان تھے جن کے لیے سیلف میڈ جیسے لفظ بنے ہیں،بھارتی پنجاب کے قصبے کرنال میں پیدا ہوئے،پاکستان بننے کے بعد والدین کے ساتھ جھنگ آ گئے،خاندان قیام پاکستان سے پہلے بھی غریب تھا اور پاکستان بننے کے بعد بھی۔ بڑی مشکل سے میٹرک تک تعلیم حاصل کی،لاہور میں میونسپل کارپوریشن میں ملازم ہو گئے۔

سو روپے ماہانہ معاوضہ ملتا تھا،خاندان بڑا تھا،آمدنی کم تھی چنانچہ وہ شام کے وقت آلو چھولے کی ریڑھی لگانے لگے،یہ ’’کاروبار‘‘چل پڑا تو کمپنی کو پان اور سگریٹ تک پھیلا دیا،وہ دن کی ملازمت اور شام کے کاروبار سے ایک گھنٹہ بچاتے تھے اور رات سونے سے پہلے کہانیاں لکھتے تھے،ان کی پہلی کہانی 1960 ء کی دہائی میں کراچی کے کسی رسالے میں شایع ہوئی،وہ کہانی اشتیاق صاحب کے لیے رہنمائی ثابت ہوئی اور وہ باقاعدگی سے لکھنے لگے،کہانیاں سیارہ ڈائجسٹ میں شایع ہونے لگیں،وہ کہانی دینے کے لیے خود ڈائجسٹ کے دفتر جاتے تھے۔

کہانی بھی دے آتے تھے اور مفت پروف بھی پڑھ دیتے تھے،پبلشر کو ان کی یہ لگن پسند آ گئی،اس نے انھیں پروف ریڈر کی جاب آفر کر دی،اشتیاق صاحب نے میونسپل کارپوریشن کی پکی نوکری چھوڑی اور 100 روپے ماہانہ پر کچے پروف ریڈر بن گئے،وہ اب کہانیاں لکھتے تھے اور پروف پڑھتے تھے،کہانیاں رومانوی ہوتی تھیں،ان کی چند کہانیاں ’’اردو ڈائجسٹ‘،میں بھی شایع ہوئیں،1971ء میں پہلا ناول لکھا،وہ ناول رومانوی تھا،پبلشر نے وہ ناول پڑھنے کے بعد انھیں جاسوسی ناول لکھنے کا مشورہ دیا،اشتیاق صاحب نے قلم اٹھایا،محمود،فاروق،فرزانہ اور انسپکٹر جمشید کے لافانی کردار تخلیق کیے اور صرف تین دن میں ناول مکمل کر کے پبلشر کے پاس پہنچ گئے اور پھر اس کے بعد واپس مڑ کر نہ دیکھا،وہ شروع میں شیخ غلام علی اینڈ سنز کے لیے لکھتے تھے۔

پھر شراکت داری پر ’’مکتبہ اشتیاق‘‘بنالیا اور آخر میں اشتیاق پبلی کیشنز کے نام سے اپنا اشاعتی ادارہ بنا لیا،وہ ہفتے میں چار ناول لکھتے تھے،ان ناولوں کی باقاعدہ ایڈوانس بکنگ ہوتی تھی،آپ کسی دن نادرا کا ریکارڈ نکال کر دیکھیں،آپ کو 80،90 اور 2000ء کی دہائی میں لاکھوں بچوں کے نام محمود،فاروق،جمشید اور فرزانہ ملیں گے،یہ نام کہاں سے آئے،یہ نام اشتیاق صاحب کے ناولوں سے کشید ہوئے،وہ جھنگ میں بیٹھ کر صرف ایک کام کرتے تھے،لکھتے تھے اور صرف لکھتے تھے،اللہ تعالیٰ نے انھیں کہانیاں بُننے کا ملکہ دے رکھا تھا،اشتیاق صاحب کی کہانی آخری سطر تک اپنا سسپنس برقرار رکھتی تھی۔

ان کے لفظوں میں مقناطیسیت تھی،قاری ان کا لکھا ایک فقرہ پڑھتا تھا اور اس کی آنکھیں لوہا بن جاتی تھیں اور وہ اس کے بعد ان کی تحریر سے نظریں نہیں ہٹا پاتا تھا،مقبولیت اگر کوئی چیز ہوتی ہے تو اشتیاق احمد اس کی عملی تفسیر تھے اور اگر تحریر کو پڑھے جانے کے قابل بنانا ایک فن ہے تو اشتیاق احمد اس فن کے امام تھے،وہ لکھتے بچوں کے لیے تھے لیکن ان کے پڑھنے والوں میں آٹھ سے اسی سال تک کے ’’نوجوان‘‘شامل تھے،وہ بڑے شہروں سے گھبراتے تھے۔

ان میں ایک خاص نوعیت کی جھجک اور شرمیلا پن تھا،وہ درویش صفت تھے،انھوں نے عمر کے آخری پندرہ سال مذہب کے دامن میں گزارے،وہ باریش ہو گئے،جامعۃ الرشید کے ساتھ منسلک ہوئے،روزنامہ اسلام کا بچوں کا میگزین سنبھال لیا،حلیہ بھی عاجز تھا اور حرکتیں بھی چنانچہ وہ قلمی کمالات اور ادبی تاریخ رقم کرنے کے باوجود سرکاری اعزازات سے محروم رہے،خاک سے اٹھے انسان تھے،خاک میں کھیل کھیل کر خاک میں مل گئے،سرکار نے زندگی میں ان کا احوال پوچھا اور نہ ہی سرکار کو ان کے مرنے کے بعد ان کا احساس ہوا،وہ تھے تو سب کچھ ہونے کے باوجود کچھ نہیں تھے۔

وہ نہیں ہیں تو ورثے میں ہزاروں کہانیاں،100 کتابیں اور 800 ناول چھوڑنے کے باوجود کچھ بھی نہیں ہیں،سرکار زندگی میں ان کی طرف متوجہ ہوئی اور نہ ہی مرنے کے بعد،کاش ان کی بھی کوئی لابی ہوتی،کاش یہ بھی کسی بڑے شہر میں پلے ہوتے،کاش یہ بھی انگریزی ہی سیکھ لیتے اور یہ برطانیہ اور امریکا کے بچوں کے لیے کہانیاں لکھتے تو زندگی میں بھی ان کے گھر کے سامنے لوگوں کا مجمع رہتا اور موت کے بعد بھی ان کی قبر،ان کے گھر کے سامنے سے پھول ختم نہ ہوتے،یہ بس کرنالی،جھنگوی اور پاکستانی ہونے کی وجہ سے مار کھا گئے،یہ ایک گم نام‘ناتمام زندگی گزار کر رخصت ہو گئے اور ان کی ہزار کتابیں بھی ان کو نامور نہ بنا سکیں،حکومت ان کے وجود سے بے خبر تھی اور ان کی آخری سانس تک بے خبر رہی۔

وہ منگل کی اس دوپہر کراچی ائیر پورٹ پہنچے،بورڈنگ کروائی،ظہر کی نماز ادا کی،قاری عبدالرحمن کا فون ریسیو کیا،انھیں بتایا ’’فلائیٹ وقت پر ہے،میں انشاء اللہ عصر کی نماز لاہور میں پڑھوں گا‘‘اور لاؤنج میں بیٹھ گئے،لاؤنج میں کوئی شخص انھیں نہیں جانتا تھا،جان بھی کیسے سکتا تھا،وہ حلیے سے پورے مولوی لگتے تھے اور آج کے زمانے میں کوئی شخص کسی مولوی کو پیار اور دلچسپی سے نہیں دیکھتا،اشتیاق احمد کو بیٹھے بیٹھے بے چینی ہونے لگی،ماتھے پر پسینہ آ گیا،دل گھبرانے لگا،سانس چڑھنے لگی اور نبض کی رفتار میں اضافہ ہونے لگا،وہ پریشانی کے عالم میں دائیں بائیں دیکھنے لگے لیکن وہاں ان کا کوئی مددگار نہیں تھا،اس دوران فلائیٹ کا اعلان ہو گیا،وہ ہمت کر کے قطار میں کھڑے ہو گئے لیکن ان کی ٹانگوں میں جان کم ہو رہی تھی۔

وہ آگے بڑھے اور کاؤنٹر پر کھڑی خاتون کو بتایا ’’مجھے سانس لینے میں دشواری ہو رہی ہے پلیز ڈاکٹر کو بلا دیں‘‘خاتون نے انھیں بیٹھنے کی ہدایت کی اور کام میں مصروف ہو گئی،وہ سیٹ پر بیٹھ گئے اور لمبے لمبے سانس لینے لگے،ان کے سینے میں شدید درد تھا،وہ بری طرح کراہ رہے تھے،ان کو کراہتے دیکھ کر مسافر نے شور مچا دیا،اس کے بعد وہاں ’’ڈاکٹر بلاؤ،ڈاکٹر بلاؤ‘‘کی آوازیں گونجنے لگیں،اشتیاق صاحب اس دوران تڑپنے لگے،مسافروں نے ان کے تڑپنے کا نظارہ دیکھنے کے لیے ان کے گرد گھیرا ڈال لیا،ہجوم کی وجہ سے آکسیجن کم ہو گئی،انھوں نے لمبی ہچکی لی اور دم توڑ دیا،ڈاکٹر آدھ گھنٹے بعد وہاں پہنچا،وہ خالی ہاتھ تھا،اس کے پاس سٹیتھو اسکوپ تک نہیں تھا،ڈاکٹر نے ان کی نبض ٹٹولی،نتھنوں پر انگلی رکھی،دل کو دبا کر دیکھا اور پھر مایوسی سے سر ہلا کر کہا ’’مولوی صاحب مر چکے ہیں‘‘لوگ افسوس سے لاش کو دیکھنے لگے۔

اشتیاق صاحب کے انتقال کے آدھ گھنٹے بعد اسٹریچر آیا،اسٹریچر گندہ بھی تھا اور ٹوٹا ہوا بھی،لاش سیٹ سے اٹھا کر اسٹریچر پر ڈال دی گئی،قاری عبدالرحمن پہنچے،لاش ان کے حوالے کر دی گئی،بورڈنگ پاس ابھی تک ان کے ہاتھ میں تھا،یہ بورڈنگ پاس وزیر اعظم اور وزیراعظم کے مشیر شجاعت عظیم کے نام ان کا آخری پیغام تھا ’’خدا کے لیے ملک کے تمام ائیر پورٹس پر کلینکس بنوا دیں،میں آج مر گیا ہوں،کل آپ کی باری بھی آ سکتی ہے،اللہ نہ کرے آپ یوں ڈیپارچر لاؤنج میں آخری سانس لیں‘‘۔ ڈرائیور نے ان کے ہاتھ سے بورڈنگ پاس کھینچا،اسٹریچر اندر رکھا،ایمبولینس کا دروازہ بند کیا اور محمود،فاروق،انسپکٹر جمشید اور فرزانہ جیسے کرداروں کا خالق دنیا سے رخصت ہوگیا۔

وہ زمین کا رزق زمین کے معدے میں اتر گیا،پیچھے صرف تاسف اور بے حسی رہ گئی،یہ بے حسی اور یہ تاسف آج بھی کراچی ائیرپورٹ کے لاؤنج کی اس نشست پر پڑا ہے جس پر اشتیاق صاحب نے آخری سانس لی تھی،یہ تاسف اور یہ بے حسی یہاں برسوں تک بال کھولے پڑی رہے گی،کیوں؟ کیونکہ یہ وہ جگہ ہے جہاں ملک کے سب سے بڑے ادیب نے طبی امداد نہ ملنے کی وجہ سے دم توڑا،اگر ائیرپورٹ پر ڈاکٹر ہوتا تو شاید وہ بچ جاتے لیکن یہ اگر اور مگر اشتیاق صاحب جیسے لوگوں کے لیے نہیں ہے،یہ لفظ میاں نواز شریف اور شجاعت عظیم جیسے لوگوں کے لیے بنے ہیں،یہ لوگ ہمیشہ قائم رہیں گے جب کہ اشتیاق صاحب جیسے لوگ بورڈنگ پاس ہاتھوں میں پکڑ کر دنیا سے اسی طرح رخصت ہوتے رہیں گے،رہے نام سدا بے حسی کا۔

Ramadan boosts Britain’s big supermarkets with £100million sales uplift

  • Three million UK Muslims will break fast in evenings during holy month
  • Religious festival is third biggest for stores behind Christmas and Easter
  • Morrisons to sell 2m tons of rice and Tesco will see sales jump by £30m
  • Sainsbury’s says festival is ‘increasingly important calendar date for us’

 

Britain’s biggest supermarkets have been boosted with a £100million sales uplift thanks to Ramadan.

Three million Muslims in the UK will break their fast with lavish sundown meals during the Islamic holy month, which began last Thursday and ends with the Eid celebration on July 18 this year.

And this is welcomed by supermarkets, with retail consultants saying the religious festival is now the third most important to stores behind Christmas and Easter – with meat, rice and fruit the big sellers.

Specials: Tesco runs Ramadan promotions in more than 300 stores in Britain, and said demand for key products including chapati flour, oil and dates rises by 70 per cent

Specials: Tesco runs Ramadan promotions in more than 300 stores in Britain, and said demand for key products including chapati flour, oil and dates rises by 70 per cent

Morrisons is expected to sell more than two million tons of rice, Sainsbury’s says rice sales are up at least 100 per cent year on year, while Tesco believes sales will jump by £30million during the month.

Sainsbury’s world foods expert Hennah Baseer told MailOnline today: ‘Ramadan is becoming an increasingly important calendar date for us.

‘This year we’ve already seen an increase in customers buying Asian products from our stores. Sales are up on key ingredients that are used to cook meals during Ramadan.

‘We have a promotional event for Ramadan taking place in 270 stores until July 21 – geographically specific to stores that have a higher proportion of customers that take part in Ramadan.’

Meanwhile, Tesco runs Ramadan promotions in more than 300 stores in Britain, and said demand for key products including chapati flour, oil and dates rises by 70 per cent.

g eating: Three million Muslims in the UK will break their fast with lavish sundown meals during the Islamic holy month, which began last Thursday and ends with the Eid celebration on July 18 (file picture)

A spokesman said: ‘Ramadan is an important time in the calendar for many of our customers and colleagues and sees friends and families gathering together around the dinner table.

WHICH ITEMS ARE THE BIGGEST SELLERS FOR TESCO AT RAMADAN?

  • Tesco Sunflower Oil, 5 litre
  • Laila Basmati Rice, 4kg
  • Tesco Chapatti Flour 10kg
  • Tesco Dates (Tunisian Khouat Allig Dates)
  • Herb bunches
  • Lancashire Yoghurts
  • Fresh & Frozen Halal Chicken
  • Frozen lines such as samosas, kebabs and pastry

 

‘Food plays a hugely significant role during this month, which is why we are proud to offer a delicious range of meals and products to meet the needs of our customers.’

Morrisons shifts 80,000 boxes of dates during Ramadan, while it also experiences a 40,000 per cent sales uplift on its 10kg Amira rice, which is sold at half price for the month.

George Scott, of retail consultancy Conlumino, told The Times: ‘In terms of religious festivals, Ramadan is second now to Christmas and Easter in its importance to food retailers.

‘It’s very lucrative. It’s a growing market because the country is becoming more diverse – and if the supermarkets want to win customers, they have to cater to every taste.’

Ramadan – during which eating and drinking is forbidden from sunrise to sunset – is observed as a period of fasting to commemorate the first revelation of the Koran to the Prophet Mohammed.

The NHS warns that feasting during the pre-dawn and dusk meals can actually be unhealthy and cause Muslims to gain weight. It recommends food intake to be simple, and similar to a normal diet.

Oxford-based anaesthetist Dr Razeen Mahroof said: ‘The underlying message behind Ramadan is self-discipline and self-control. This shouldn’t fall apart at the end of the day.’

This Ramadan is expected to bring the most challenging fast in decades because the holy month is coinciding with the Summer Solstice in the northern hemisphere for the first time in more than 30 years.

The longer days mean the fasting period last Thursday stretched to almost 19 hours in Britain, compared to the Middle East where it lasted between 15 and 16 hours.

(daily mail)

 

A Ramadan poem by Qari Ahmed (of MMI)

Woh chand Ka Chamakna

Woh Masjido ka Sawarna

Woh Musalmano Ki Dhoom

Ramzan is coming soon

Woh Sehri Ka Maza

Woh Iftar Ki Bhook

Woh Quran Ki Tilaawat

Woh Namaz Ka Mamool

Woh Roze Ki Barkat

Woh Roze Ka Noor       

       MAHE RAMZAN MUBARAK

(Qari Muhammad Ahmed -Masjid Madinaul Ilm)